تازہ ترین

پاکستان اور آئی ایس آئی تنخواہداروں کی سیکورٹی کا جائزہ لیا جائیگا

کانوائے کے دوران پرائیویٹ ٹریفک بند ہوگا:راجناتھ سنگھ

16 فروری 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

بلال فرقانی
سرینگر// مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے کہا ہے کہ ہم جنگجویت کو برداشت نہیں کریں گے،اور اس کا خاتمہ کیا جائے گا،قبل اس کے،یہ  نا قابل برداشت بن جائے۔راجناتھ سنگھ نے کہا کہ خود کش حملہ کے پیش نظر فورسز کی کانوائے گاڑیاں چلنے کے دوران دیگر ہر قسم کے ٹریفک پر روک لگا دی جائیگی۔انہوں نے مزید کہا کہ جو لوگ پاکستان اور آئی ایس آئی کے تنخواہ پر کام کرتے ہیں انکی سیکورٹی کا جائزہ لیا جائیگا۔ راج ناتھ سنگھ جمعہ کو سی آر پی ایف قافلے پر حملے میں ہلاک ہوئے اہلکاروں کو خراج عقیدت ادا کرنے اور سیکورٹی کا جائزہ لینے کیلئے سرینگر پہنچے۔راج ناتھ سنگھ نے ہمہامہ میں مہلوک سی آر پی ایف اہلکاروں کی گلہائے عقیدت کی تقریب میں شرکت کی۔وزیر داخلہ نے اس بات کا یقین ظاہر کیا کہ ملک،دہشت گردی کے خلاف جنگ میں کامیابی حاصل کرے گا،جبکہ اس بات پر خوشی کا اظہار کیا ’’ اس جنگ میں جموں کشمیر کے لوگ ہمارے ساتھ ہے،اگرچہ کچھ لوگ اور جماعتوں کا جنگجوئوں گروپوں اور پاکستان کے ساتھ ساز باز ہے‘‘۔ نئی دہلی روانہ ہونے سے قبل سرینگر ائرپورٹ پر نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے راج ناتھ سنگھ نے کہا’’ خود کش حملہ ہونے کے باعث اس بات کا فیصلہ کیا گیا ہے کہ سیکورٹی فورسز کی بڑی کانوائے شاہراہ پر چلنے کے دوران پرائیویٹ ٹریفک کو کچھ وقت تک روک دیا جائیگا‘‘۔مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ کشمیر میں کچھ عناصر ایسے ہیں جو پاکستان اور آئی ایس آئی کے تنخواہوں پر کام کرتے ہیں۔انہوں نے کسی کا نام لئے بغیر کہا’’ میں نے سیکورٹی ایجنسیوں کے سربراہوں کو ہدایت دی ہے کہ ایسے عناصر کی سیکورٹی کا جائزہ لیا جائے‘‘۔انہوں نے کہا کہ نئی دہلی کی طرف سے ’’دہشت گردی‘‘ کے خلاف جنگ میں پورے ملک کے لوگ موجودہ حکومت کے شانہ بہ شانہ ہے۔ان کا کہنا تھاہم اس بات کی اجازت نہیں دینگے کہ کنٹرول لائن کے اُس پار سازش تیار کرنے والے اپنے منصوبوں میں کامیاب ہوں‘‘۔ ان کا کہنا تھا’’ہم نے اپنے فورسز کو جنگجویت سے نپٹنے کی کھلی آزادی دی ہے‘‘ ۔ راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ کشمیر میں جنگجویت کے پیچھے جو لوگ ہیں ،انکی جڑیں پاکستان میں ہیں۔ان کا کہنا تھا’’ وہ جموں کشمیر کے لوگوں، با لخصوص نوجوانوں کے مستقبل کے ساتھ کھیل رہے ہیں،اور ہم انہیں انکے مشن میں کامیاب نہیں ہونے دینگے‘‘۔ راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ نہ صرف بھارت بلکہ اسلامی ملک بھی اقوام عالم میں دہشت گردی کے خلاف اٹھ کھڑے ہوئے ہیں۔ لیتہ پورہ حملے کو سیکورٹی میں خامیوں کا نتیجہ ہونے سے متعلق پوچھے گئے سوال کا جواب دیتے ہوئے راج ناتھ سنگھ نے کہا’’تمام زاوئیوں سے تحقیقات کی جائے گی،اور تحقیقات کا انتظار کیا جانا چاہیے۔ جموں میں لوٹ مار سے متعلق پوچھے گئے سوال کے جواب میں راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ انہوں نے ریاستی گورنر ایس پی ملک اور ریاستی انتظامیہ کو ہدایت دی ہے کہ امن میں خلل ڈالنے والوں اور ہم آہنگی کو زک پہنچانے والوں کے خلاف سختی سے نپٹا جائے۔انہوں نے کہا’’ جو بھی امن میں خلل ڈالنے کی کوشش کرے گا،اور لوٹ مار کرے گا،کے خلاف سختی سے نپٹا جائے گا۔‘‘ اس موقعہ پر مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے بھارت بھر کے لوگوں اور جموں کشمیر کے عوام سے آپسی بھائی چارہ اور امن بنائے رکھنے کی اپیل کی۔انہوں نے کہا’’ جب بھی لیتہ پورہ جیسے واقعات رونما ہوتے ہیں،کچھ لوگ فرقہ پرست تشدد بپا کرنے کی کوشش کرتے ہیں،اور میں بھارت کے لوگوں بلا تمیز مذہب ونسل و ذات پر زور دیتا ہوں کہ،وہ اس موقعہ پر آپسی بھائی چارے کو بنائے رکھے‘‘۔اس سے قبل مرکزی وزیر داخلہ نے تقریب کے دوران ہلاک شدہ سی آرپی ایف اہلکاروں کے تابوت کو کندھا بھی دیا۔ تقریب کے دوران40 مہلوک اہلکاروں کے تابوت کو ترنگے میں لپٹا گیا تھا۔اس موقعہ پر ریاستی گورنر ایس پی ملک،مرکزی داخلہ سیکریٹری راجیو گابا،سی آر پی ایف کے ڈائریکٹر جنرل آر آر بٹھانگر اور ریاستی پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ بھی موجود تھے۔.