مڈل سکول چنڈیال اورہائی سکول سنگیوٹ کادرجہ بڑھانے کامطالبہ

15 مارچ 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

جاوید اقبال
مینڈھر//بالاکوٹ بلاک کی چنڈیال سنگیوٹ پنچائت کی خاتون سرپنچ نے مڈل سکول چنڈیال کادرجہ نہ بڑھانے پرگورنر انتظامیہ کے تئیں ناراضگی کااظہارکیاہے۔اس سلسلے میں جاری پریس بیان میں چنڈیال سنگیوٹ کی خاتون سرپنچ شمیم اخترنے کہاکہ چنڈیال،سنگیوٹ کا علاقہ دور دراز پہاڑی پر واقع ہے اوریہاں کے بچوں کیلئے علاقہ کے مڈل سکول کادرجہ بڑھایاجاناضروری تھا۔سرپنچ نے کہاکہ یہاں کے بچے ہائی سکول نہ ہونے کی وجہ سے طویل مسافت طے کرکے ہائی سکول کی تعلیم حاصل کرنے جاتے ہیں۔انھوں نے محکمہ تعلیم کے اعلی افسران کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ مڈل سکول چنڈیال1975میں مڈل سکول قائم ہوا تھا جو آ ج تک مڈل سکول ہی ہے اور اس کے ارد گرد پندرہ پرائمری سکول ہیں جن سے تعلیم حاصل کرکے مڈل سکول چنڈیال میں داخلہ لیتی ہے اورپھرآٹھویں میں بھاری تعدادپاس ہوکرنویں جماعت کی تعلیم کیلئے لمبی مساطت طے کرکے تعلیم حاصل کرتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ مڈل سکول چنڈیال کوہائی سکول کادرجہ اس علاقہ کی عوام کاحق ہے لیکن محکمہ تعلیم کے اعلی افسران نے ہمارے ساتھ سراسر نا انصافی کی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ گورنر انتظامیہ کوفوری طور فیصلے پرازسرنوغوکرکے مڈل سکول چنڈیال اورہائی سکول سنگیوٹ کادرجہ بڑھایاچاہیئے تاکہ اس دور دراز علاقہ کے لوگوں کے طلبا آسانی سے اپنی تعلیم حاصل کر سکیں ۔انہوں نے کہاکہ علاقہ میں ہائی اورہائرسکینڈری سکول نہ ہونے کی وجہ سے ہمارے بچوں کو تعلیم حاصل کرنے کیلئے راجوری ضلع کے سکولوں میں جانا پڑتا ہے ۔انہوں نے کہاکہ ہم ضلع راجوری کی سرحدی پٹی پر بستے ہیں لہذا ہمارے ساتھ گورنر انتظامیہ کوانصاف کرنے کیلئے اقدامات اٹھانے چاہیئںتاکہ دور دراز علاقہ کے بچے میں اپنی تعلیم آسانی سے جاری رکھ سکیں۔ان کا مزید کہنا تھا کہ دور دراز علاقہ کے اندر ایک گرلز ہائی سکول بھی قائم کیاجاچاہیئے تاکہ ہماری بچیاںبھی تعلیم حاصل کرسکیں۔انہوں نے کہاکہ لڑکیوں کیلئے سکول نہ ہونے کی وجہ سے بچیوں کوتعلیم چھوڑناپڑتی ہے۔انہوں نے انتباہ دیاکہ اگرعلاقہ کے سکولوں کادرجہ نہ بڑھایاگیاتوہم احتجاج کرنے پرمجبورہوجائیں گے۔
 

تازہ ترین