سمبل واقعہ پر مین اسٹریم ،مزاحمتی اور مذہبی جماعتیں برہم

شمیمہ فردوس کا گورنرکومیمورنڈم پیش | حق خان نے 2018میں مرتب ہوئے قانون کے مطابق سزا دینے کا مطالبہ کیا

15 مئی 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

نیو ڈسک
سرینگر //پی ڈی پی کے سینئر لیڈر و سابق وزیر قانون و انصاف عبدالحق خان نے سمبل واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے ایسے واقعات پر سال 2018میں مرتب ہوئے قانون کے مطابق سزا دینے پر زور دیاہے ۔اپنے ایک بیان میں عبدالحق خان نے کہاکہ پی ڈی پی کی قیادت والی حکومت نے سزائے موت کا قانون مرتب کروایا جسے کابینہ کی طرف سے بھی منظوری دی گئی۔انہوں نے بتایاکہ ایسے واقعات میں روزانہ کی بنیاد پر سماعت ہونی چاہئے اور مجرم کو سزائے موت دی جائے ۔سابق وزیر قانون نے کہاکہ اس حوالے سے پہلے ریاست میں یہ قانون بناجس کے بعد ملک میں بھی ایسا ہی قانون بنایاگیا ۔انہوں نے کہاکہ یہ قانون کٹھوعہ کے رسانہ علاقے میں پیش آئے عصمت دری اور قتل کے واقعہ کے تناظر میں بنایاگیا جس پر عمل کرنے کی ضرورت ہے ۔ ان کاکہناتھاکہ ایسے واقعات ہمارے معاشرے کیلئے تشویش کا باعث ہیں اوردرندہ صفت عناصر کو سبق آموز سزا دینے تک ان پر روک لگانا مشکل ہے ۔انہوںنے کہاکہ بانڈی پورہ کیس کی تحقیقات میں تیزی لاکر عدالت میں چالان پیش کرناچاہئے تاکہ مجرم کو قرارواقعہ سزا ملے اور متاثرہ کو انصاف فراہم ہو۔واضح رہے کہ گزشتہ برس یہ قانون پاس ہواہے کہ 12سال سے کم عمر بچے کے ساتھ جنسی زیادتی پر سزائے موت دی جائے گی ۔پی ڈی ایف کے چیئرمین حکیم یاسین نے مذمت کرتے ہوئے مانگ کی ہے کہ مجرم کو ایسی عبرتناک سزا دی جاہے تاکہ آیندہ کوئی ایسی شرمناک اور گھناونی حرکت کرنے کی ہمت نہ کر سکے۔ انہوں نے مانگ کی ہے کہ مذکورہ واقعہ کی عدالتی تحقیقات کیلئے ایک خصوصی بینچ قایم کیا جانا چاہئے ۔ حکیم یاسین نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ مفاد پرست عناصر کی طرف سے اس واقعہ کو شیعہ سنی منافرت میں تبدیل کر نے کی مذموم سازش کو ناکام بنائیں۔نیشنل کانفرنس خواتین ونگ کی ریاستی صدر ایڈوکیٹ شمیمہ فردوس اور صوبائی صدر انجینئر صبیہ قادری نے ریاست کے گورنر ستیہ پال ملک کے ساتھ راج بھون میں ملاقات کی۔ شمیمہ فردوس نے گورنر موصوف کو سمبل سانحہ سے متعلق ایک تحریری میمورنڈم پیش کیا۔ جس میں اس کیس کی پوری نوعیت اور عوامی مطالبات کے تحت کیس کی تیز رفتار تحقیقات اور خاطی کو قرار واقعی سزا دینے کی اپیل کی گئی ۔ شمیمہ فردوس نے کہا کہ ماضی میں اس قسم کے واقعات کی اگر بروقت شنوائی اور متاثرین کو انصاف ملا ہوتا تو شائد ایسے واقعات دوبارہ پیش نہ آتے۔ کٹھوعہ کی مثال پیش کرتے ہوئے این سی خواتین ونگ صدر نے کہا کہ اس کیس پر سیاست کو مسلط کیا گیا اور سیاسی بنیادوں پر اس کیس دبانے کی ہر کوشش کی گئی۔ نیشنل کانفرنس کے لیڈر تنویر صادق نے ترگام سمبل میں پیش آئے انسانیت سوز واقعہ کو لمحہ فکریہ قرار دیتے ہوئے اس بات پر افسوس اور تشویش کا اظہار کیا کہ کچھ موقعہ پرست ،شرپسند اور شیطانی ذہنیت رکھنے والے عناصر اس واقعات سے اپنے حقیر سیاسی مفادات حاصل کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایک ایسے وقت میں جب ہمیں بحیثیت مجموعی اپنے سماج کی بگڑتی ہوئی حالت کو سدھارنے کیلئے سر جوڑ کر بیٹھے کی ضرورت ہے ، چند خود غرض اور ابن الوقت عناصر معاشرے میں پھوٹ ڈالنے کی کوشش کررہے ہیں۔ تنویر صادق نے کہا کہ ایسے عناصر کے مذموم اور ناپاک اداروں کو ناکام بنانا وقت کی اہم ضرورت ہے اور اس کیلئے لوگوں کو اتحاد و اتفاق دکھانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے پولیس کی طرف سے اس واقعہ کیخلاف احتجاج کرنے والوں کیخلاف طاقت کے بے تحاشہ استعمال کی بھی مذمت کی۔ اُن کا کہنا تھا کہ امن و قانون نافذ کرنے والے اداروں کو طاقت کا استعمال کرنے کے بجائے عوام کو اعتماد میں لیکر احتجاجی مظاہرین کیساتھ نرمی سے نمٹنا چاہئے۔ تنویر صادق نے واقعہ میں کی متاثرہ بچی کو انصاف کی مانگ کرتے ہوئے ملوث فرد کو قرارواقعی سزا دینے کا مطالبہ کی۔دریں اثناء صدرِ ضلع گاندربل شیخ اشفاق جبار نے واقعہ کی مذمت کی ہے۔دریں اثناء سکھ کارڈنیشن کمیٹی نے سمبل سانحہ میںملوث مجرمین کو سخت سزا دینے کی مانگ کی ہے۔اپنے ایک بیان میں سکھ کارڈنیشن کمیٹی کے چیرمین جگموہن سنگھ رینہ نے اس سلسلے میں گورنر اور دیگر آ فیسروں کی جنگی بنیادوں پر کام کرنے کی یقین دہانی پران کا شکریہ ادا کیا ہے۔
 
 
 

مسلکی منافرت پھیلانے والے ناکام:مذہبی و مزاحمتی جماعتیں

سرینگر// محاذآزادی کے صدر محمد اقبال میر اور نائب صدر قطب عالم نے مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اس انسانیت سوز اور دل دہلانے والے واقعہ  سے انسانیت شرمسار ہوئی ہے ۔انہوں نے مطالبہ کیا  اس واقعے میں ملوث ملزم کو قرار واقعی سزا دی جائے۔پیروان ولایت کے سربراہ مولانا سبط محمد شبیر قمی اورصدر مولانا شبیر احمد صوفی نے پرامن مظاہرین پر طاقت کے استعمال کی مذمت کرتے اسے انتہائی افسوسناک قرار دیا اور کہا کہ معصومہ کو انصاف دلانے کے بجائے فورسز نے پر امن مظاہرین پر طاقت کا استعمال کرکے ثابت کردیا کہ ملزم کو درپردہ بچانے کی سازشیں رچائی جارہی ہیں۔انہوں نے وادی بھر میں باہمی اتحاد و اتفاق کے ساتھ احتجاج کرنے پر عوام کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ شیعہ سنی اتحاد نے ایسے مفاد پرست افراد کے ناک میں دم کردیا جو اس دلسوز سانحہ کو مسلکی منافرت کا ہوا دے رہے ہیں۔انجمن علماء وائمہ مساجدجموں کشمیر کے امیر حافظ عبدالرحمن اشرفی مہتمم دارالعلوم سید المرسلین چوگام قاضی گنڈ نے واقعہ پرگہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اس کی بھرپور مذمت کی۔انہوں نے جموں کشمیر کے تمام ائمہ وعلماء اور دینی انجمنوں اور تنظیموں کے ذمہ داروں سے گزارش کی ہی کہ وہ معاشرے میں پھیلی برائیوں کو جڑسے اکھاڑ پھینکنے میں اپنا کردار اداکریں۔ جامعہ ضیاء العلوم پونچھ جموں کشمیر کے نائب مہتمم و صدر تنظیم علماء  اہل سنت ولجماعت پونچھ مولانا سعید احمد حبیب نے سمبل بانڈی پورہ میں پیش آئے  درندگی کے واقعہ پرافسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ معاشرتی بگاڑ اور خرابیاں اب اس حد تک جا پہنچی ہیں کہ اب ایسے ددرناک واقعات ہمارے سماج کی کہانی بن چکے ہیں، ہماری بے حسی اور سماجی معاملات سے لا تعلقی کی وجہ سے اب معصوم بچیوں کی تارتار ہوتی عصمتیں اور ان کی چیخیں ہمارے لئے معمول کی بات بن چکے ہیں اخلاق اور کردار کی گراوٹ کی یہ سطح کسی بھی قوم کی ہلاکت اور تباہی کیلئے کافی ہے۔
 

تازہ ترین