زرعی شعبہ حکومت کی ترجیحات میں سرفہرست: سیتا رمن

12 جون 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

یو این آئی
نئی دہلی// وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے دیہی شعبوں میں اقتصادی اور سماجی انفراسٹرکچر کو مضبوط کرنے ، زاعت اور اس سے متعلق شعبوں کی ترقی کے ذریعے بے روزگاری دور کرنے اور غریبی کے خاتمے پر زور دیتے ہوئے منگل کو کہا کہ زرعی شعبے کے چیلنجز حکومت کی ترجیحات میں اول ہیں۔ محترمہ سیتارمن نے یہاں زراعت اور دیہی ترقیات کے نمائندوں کے ساتھ بجٹ سے قبل چرچا میں یہ باتیں کہیں۔ انہوں نے اس دوران دیہی ترقی کے شعبوں کے مالی اور سماجی انفراسٹکچر پر زور دیا اور کہا کہ بے روزگاری اور غریبی کے خاتمے کے لیے زراعت اور اس سے سے متعلق غیر زرعی شعبے کو ترقی دینے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے ملک کے ہر شعبے کی حصہ داری پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ان سبھی کو لاحق تشویش و فکر کو اس میں شامل کیا جا سکے گا۔ زرعی شعبے کے چیلنجز موجودہ حکومت کی ترجیحات میں سرفہرست ہیں۔محترمہ سیتارمن نے سمندری وسائل کے زیادہ سے زیادہ استعمال کے لیے مچھلی پروری کے تمام شراکت داروں کے ساتھ بھی غوروخوض کیا۔ انہوں نے بتایا کہ اسٹارٹ اپ کا استعمال بڑھایا جانا چاہیے جس سے زرعی بازار کی رکاوٹیں دور ہوسکیں اور صارفین کو مناسب قیمت پر چیزیں مل سکیں۔ محترمہ سیتارمن کے ساتھ بجٹ سے قبل اس چرچا میں زرعی تحقیق اور تفصیلی خدمات، دیہی ترقی، غیر زرعی شعبہ، جنگلات، فوڈ پروسیسنگ، مویشی پروری، مچھلی پروری اور زرعی شعبے سے تعلق رکھنے والے اسٹارٹ اپ کے نمائندے شامل تھے ۔ اس میٹنگ میں وزیر ملکت برائے خزانہ انوراگ ٹھاکر، نیتی آیوگ کے رکن ڈاکٹر رمیش چندر، وزارت خزانہ کے سکریٹری ایس سی گرگ، ایکسپنڈیچر (خرچ) کے سکریٹری گریش چندر موریہ، ریوینو (محصولات)سکریٹری اجے نارائن پانڈے ، محکمہ مالیاتی خدمات کے سکریٹری راجیو کمار، زرعی شعبے کے سکریٹری سنجے اگروال، دیہی ترقی کے سکریٹری امرجیت سنگھ، انڈین کونسل آٖٖف ایگریکلچر ریسرچ کے ڈائریکٹر جنرل تریلوچن مہاپاترا، چیف اکونومک ایڈاوائزر کے وی سبرامنیم اور دوسرے متعلقہ وزارتوں کے سکریٹری اور دیگر اعلیٰ افسران موجود تھے ۔ اس میں نابارڈ کے صدر ہرش کمار بھانوال، کنفیڈریشن آف انڈین انڈسٹری کے ڈائریکٹر جنرل رنجیت بنرجی کے ساتھ ہی زرعی اور دیہی ترقیات سے تعلق رکھنے والی تنظیموں کے نمائندے بھی شامل تھے ۔
 

تازہ ترین