علاقائی دیہاتی بنک کے پنشنروں کی پریشانی ختم

ماہانہ پنشن کی فراہمی کا سلسلہ شروع،صدر دفتر پر خصوصی تقریب

12 جون 2019 (00 : 01 AM)   
(   عکاسی: امان فاروق    )

نیو ڈسک
سرینگر // ایک اہم پیش رفت کے طور پر علاقائی دیہاتی بنک نے حکومت ہند کی ہدایات پر اپنے ریٹائیرڈ ملازمین کو ماہانہ پنشن کی فراہمی کا سلسلہ شروع کیا ہے۔چنانچہ عید کے مبارک موقع پر پنشن کی ادائیگی کا سلسلہ شروع ہوا ہے اور اب تک158ملازمین کے حق میں 59لاکھ کی پنشن گذشتہ ماہ واگزار کی گئی ہے۔ حکام کے مطابق اس پنشن کا اطلاق 4جنوری 2018 سے ہو گا ۔ اس حوالے سے منگل 11جون کو برزلہ باغات میں واقع بنک کے صدر دفتر میں ایک پُروقار تقریب منعقد ہوئی ، جس میں باضابطہ طور پر سبکدوش ملازمین کو پنشن ادائیگی کے آڈر سونپے گئے۔ تقریب میں NABARD کے ڈپٹی جنرل منیجر قمر جاوید اور بنک کے سابق چیئرمین احمد اللہ ٹاک مہمان خصوصی تھے جبکہ چیئرمین ارشد حسین نے صدارت کی۔ اس موقعہ پر مقررین نے ریٹائرڈ ملازمین کو مبارکباد دیتے ہوئے کہاکہ ان کی برادری اب نئے سرے سے بنک کا حصہ بن گئی ہے، لہذا انہیں بنک کے فروغ و ترقی کے ساتھ ساتھ موجودہ عملے کی رہنمائی کرنے میں بھرپور رول ادا کرنا چاہئے۔ ارشد حسین نے کہاکہ پنشن کی ادائیگی سے یقینا بنک کے اخراجات میں اضافہ ہوگا تاہم انہیں یقین ہے کہ ہم سب مل کر بنک کو ترقی کے عروج پر پہنچانے میں بھرپور محنت کریں گے۔ انہوں نے بنک کی مالی حالت کا ذکر کرتے ہوئے کہا ، یہ کام انجام دینا ایک بڑا چیلنج تھا لیکن چیلنجوں کو قبول کرنے میں ہی لطف ہے ۔انہوں نے کہا کہ میں آج خوش ہوں کہ ان کے ہاتھوں اپنے ملازمین کو پنشن آڈر تھمائے گئے ۔انہوں نے سبکدوش ملازمین سے کہا کہ اس بینک کو مزید مضبوط بنانے میں انہیں اُن کی مدد، رائے اور تجاویز کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے سابق ملازمین پر زور دیا کہ وہ بنک کی ترقی کیلئے اپنے رشتہ داروں قریبی دوستوں کو نئے اکاونٹس کھولنے کیلئے راغب کریں ۔انہوں نے مزید کہا کہ بینک میں 120افیسران اور 54 کلرکوں کی اسامیاں بھی خالی ہیں ۔ نبارڈ کے ڈپٹی جنرل منیجر قمر جاوید نے اپنے محکمہ کی جانب سے بنک کی ترقی کیلئے بھرپور تعاون دینے کا یقین دلایا اور سبکدوش شدہ و حاضر سروس ملازمین کو مبارکباد دی۔ دونوں طبقوں کو بنک کی ترقی و کامیابی کیلئے محنت کرنے کی تلقین کی۔قمر جاوید نے اس دوران بنک کی دن دگنی اور رات چگنی ترقی کی دعا ء کی ۔ اس موقعہ پر سابق چیئرمین احمد اللہ ٹاک نے کہا کہ اب سابق ملازمین اور بنک کے درمیان ایک بار پھر ایک رشتہ قائم ہو گیا ہے اور ہم یہ یقین دلاتے ہیں کہ بنک کے سابق ملازمین ہر ممکن تعاون اور مدد دینے کیلئے تیار ہیں ۔انہوں نے کہا کہ سابق ملازمین نے دن رات اس بنک کی ترقی کیلئے کام کیا اور اُن کی بدالت ہی بینک کے ملازمین کو پنشن کی سہولیات ملی ہیں ۔انہوں نے کہا کہ بینک ملازمین کیلئے یہ ایک تاریخی لمیہ ہے ۔انہوں نے کہا کہ اب یہ سب پر فرض ہو گیا ہے کہ بنک کی آمدنی کو مزید بڑھانے کیلئے انتھک محنت کریں ۔اس موقعہ سبکدوش ملازمین کی جانب سے شیخ عبدالقیوم اور محمد متین قادری نے بھی تقاریر کئے اور بنک کے سپانسر سٹیٹ بنک آف انڈیا، حکومت ہنداور حکومت جموںو کشمیر، جو علاقائی دیہاتی بنک میں حصہ دار ہیں، کاشکریہ ادا کیا۔ معلوم رہے کہ دیہی بنک پنشن کی سہولیات سے محروم تھے تاہم سپریم کورٹ کی ہدایت پر حکومت ہندنے دیہی بنکوں کو پنشن کے دائرے میں لانے کیلئے اکتوبر 2018 میں احکامات صادر کئے۔ اور اُن کے حق میں 4جنوری 2018 سے یہ پنشن سکیم لاگو ہوئی ہے ۔ بنک حکام کے سابق ملازمین کے مطابق اُن کی یہ دیرانہ مانگ پوری ہوئی ہے اور یہ مانگ وہ 1994سے کرتے آئے ہیں ۔بینک حکام کے مطابق 238سابق ملازمین میں سے 158ملازمین کے حق میں 59لاکھ کی پنشن گذشتہ ماہ واگزار کی گئی ہے اور آڈٹ کے بعد باقی ملازمین کے حق میں بھی پنشن فراہم کی جائے گئی ۔حکام کے مطابق بینک کو اب ایسے ملازمین کے حق میں 22کروڑ کے قریب ایریر ودیگر سہولیات دینے ہوں گے ۔
 

تازہ ترین