تازہ ترین

پبلک سیکٹر اداروں میں اصلاحات کاخیرمقدم

چیمبر کاموجودہ مالی بحران پر توجہ دینے کی تلقین

6 جولائی 2019 (48 : 10 PM)   
(      )

نیو ڈسک
سرینگر//کشمیرچیمبرآف کامرس اینڈ انڈسٹریزنے ریاستی انتظامی کونسل کے پبلک سیکٹر ،خودمختاراداروں اورسوسائٹیزکے کام کاج کو پٹری پر لانے کی غرض سے منظور کئے گئے اصلاحات کے فیصلے کاخیرمقدم کیا ہے ۔کشمیرچیمبرآف کامرس اینڈانڈسٹری کے ترجمان نے کہا کہ ریاست میں سرکاری ملکیت کے پبلک سیکٹر اوردیگرخودمختاراداروںکے کام کاج کو پٹری پر لانے کاکشمیر چیمبرکادیرینہ مطالبہ تھا۔انہوں نے کہا کہ کشمیرچیمبرآف کامرس اینڈ انڈسٹری نے تحریری طور حکومت کی توجہ اس جانب مبذول کرائی تھی ۔ انہوں نے کہا کہ پبلک سیکٹرادارے بجائے ریاست کے اقتصادیات کوسہارادینے کے خزانہ عامرہ پر ہزاروں کروڑوں روپے کا بوجھ ڈالاتھااوراسی مالیت کے آمدن کے ذرائع کو روک رکھاتھا۔کشمیر چیمبرآف کامرس اینڈانڈسٹری نے ریاست میں واضح ٹینڈرنگ اور پروکیورمنٹ پالیسی کی عدم موجودگی،جس کی وجہ سے بجلی کے شعبے میںنقصانات ہورہے ہیں،پر بھی تشویش کااظہار کیاتھا۔موجودہ ٹینڈرنگ اور پروکیورمنٹ پالیسی میں خامیوں کی وجہ سے پروجیکٹوں کی لاگت میں زبردست اضافہ ہورہا ہے ۔چیمبرترجمان نے کہا کہ شفافیت،غیرجانبداری اورخرچوں میں کفائت شعاری سے متعلق معاملات قابل سراہنا ہیں لیکن حکومت کوچاہیے کہ وہ مالی اداروں کے حوالے سے احتیاط سے کام لیں ۔ان اصلاحات کی کافی وقت سے ضرورت تھی لیکن حکومت کو اداروں کے خودمختیاری کو محفوظ رکھنا چاہیے اوراس بات کو بھی یقینی بنانا چاہیے کہ ان اصلاحات سے یہ ادارے بندہی نہ ہو۔ ترجمان نے جموں کشمیر بنک کاذکر کرتے ہوئے کہا کہ ایک ماہ کاعرصہ گزرگیا اور لگتاہے کہ جموںکشمیربنک کی سرگرمیوں کی رفتار دھیمی پڑ گئی ہے اورقرضوں کی فراہمی میں کمی ایک پریشان کن مسئلہ ہے ۔صرف یہی خبریں کیسوں کے درج  اور اختیارات کو محدود کئے جانے کی خبریں ہی آرہی ہیں ۔ لگتاہے حکومت بنک کے قرضہ داروں کے بحران کو فراموش کئے ہوئے ہیں ۔اچھاہوتا اگر حکومت جموں کشمیر بنک کی اُن اقدامات کی سراہنا کرتی جو اس نے ستمبر2014کے بعد قرضہ داروں کی سہولت کیلئے کئے ۔اس کے بعد پھر2016کے بحران میں جب کھاتوں کو سرنو ترتیب دیاگیا۔ چیمبر نے سرکار کو موجودہ مالی بحران پر توجہ دینے کی تلقین کرتے ہوئے کہا کہ اداروں کے ملاحظہ کے دوران احتیاط سے کام لیاجائے ۔ایک موثر ٹینڈرنگ اورپروکیورمنٹ پالیسی کی ترتیب لازمی ہے۔