تازہ ترین

ہل ڈیولپمنٹ کونسل نہ صوبے کادرجہ ،یہ امتیازنہیں توکیاہے ؟عوام حکومت سے نالاں

منڈی// لداخ کوصوبہ کادرجہ دینے کے بعدخطہ پیر پنچال اور خطہ چناب کے لوگوں میں متعلقہ خطوں کوصوبوں کادرجہ نہ دینے کی وجہ سے ریاستی حکومت کے تئیں غم وغصہ پایاجارہاہے اوریہ مانگ کی جارہی ہے کہ فوری طورپر خطہ پیرپنچال اورخطہ چناب کوصوبے کادرجہ دیاجائے ۔۔اس سلسلے میں پونچھ ضلع کے معززین نے کہاکہ جب گورنر انتظامیہ نے لداخ کو صوبے کا درجہ دینے کے احکامات صادر کیے گئے جس کاہم خیرمقدم کرتے ہیں لیکن خطہ پیرپنچال اورخطہ چناب کونظراندازکرناباعث تشویش بات ہے۔انہوں نے کہاکہ یاستی گورنر انتظامیہ کو چاہیئے کہ وہ خطہ پیر پنچال اور خطہ چناب کو بھی صوبے کا درجہ دیں ۔اس سلسلے میںپی ڈی پی کے سینئر لیڈر شمیم احمد گنائی نے اس حوالے سے کشمیر عظمی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ لداخ کو صوبے کا درجہ دینے سے بہتر یہ تھا کہ خطہ پنچال اور خطہ چناب کو یہ درجہ دیا جاتا کیونکہ لداخ پہلے سے ہی ہل ڈیولپمنٹ درجے سے فیضیاب ہورہا

مینڈھر میں پی ڈی پی ماہانہ اجلاس

مینڈھر//پی ڈی پی زون مینڈھر کا ماہانہ اجلاس پارٹی کے ریاستی سکریٹری ایڈوکیٹ محمد معروف خان کی صدارت میںمنعقد ہوا جس میں حسب معمول سب ڈویژن مینڈھر سے تعلق رکھنے والے اراکین پی ڈی پی نے شمولیت کی۔اس موقعہ پر اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے چوہدری محمد صادق نے تمام پی ڈی پی کارکنان پر زور دیا کہ وہ پارٹی کو مضبوط و مستحکم کرنے میں اپنا رول ادا کریں ۔انہوں نے کہا کہ جس طریقے سے پی ڈی پی نے پیر پنچال کی تعمیر و ترقی میں جو جامع منصوبہ مرتب کیا تھا وہ ہمیں یاد رکھنا چاہیے ۔ اس موقعہ پر الحاج ماسٹر محمد دین پسوال نے کہا کہ ریاست گونا گوں مشکلات سے دو چار ہے لیکن گورنر انتظامیہ اس طرف کوئی توجہ نہیں دے رہی ہے ۔انہوں نے کہاکہ گورنر انتظامیہ مرکز کے اشارے پر ہر فیصلہ لے رہی ہے جس کی وجہ سے یہاں جمہوری ادروں کو خطرہ لا حق ہے  ۔مقررین نے ریاستی گورنر سے اپیل ہے کہ وہ قانون کی پاسداری کرتے ہوئے اپنے م

نو زائید بچوں کی نگہداشت کیلئےایس این سی یو کے قیام میں تاخیر

راجوری// تھنہ منڈی میں سرکاری ہسپتال میں نوزائیدبچوں کی خصوصی نگہداشت کیلئے کوئی خصوصی یونٹ قائم نہ ہے جس کی وجہ سے عوام الناس کوراجوری یاجموں کارخ کرنے پرمجبورہوناپڑرہاہے۔اس پریشانی کے پیش نظرتھنہ منڈی کے عوام نے ریاستی محکمہ صحت سے مطالبہ کیا ہے کہ تھنہ منڈی کے سرکاری ہسپتال میں نو زائید بچوں کی نگہداشت کے لئے خصوصی(  SNCU )یونٹ قائم کیاجائے۔ تفصیلات کے مطابق کمیونٹی ہیلتھ سنٹر کوتھنہ منڈی میں مرکزی حیثیت حاصل ہے۔تحصیل تھنہ منڈی کی آبادی تقریبا 80000 ہزار سے زیادہ ہے اور تھنہ منڈی ہسپتال میں لیبر روم موجود ہے جس میں ہر ماہ کم و پیش 40-50 زچکیاں ہوتی ہیں۔لیکن نو زائید بچوں کی خصوصی نگہداشت کاکوئی بندو بست نہیں ہے۔ اس ہسپتال میں بلڈ بنک کی عدم دستیابی کی وجہ سے خون کی کمی اور وقت سے قبل پیدا ہونے والے نو زائید بچوں کو ضلع شفا خانہ راجوری منتقل کرنا پڑتا ہے جسکی وجہ سے خط افلاس سے

پنچایت حیات پورہ وکلالی میں گرام سبھاکااہتمام

منجاکوٹ //بلاک ڈیولپمنٹ افسر منجاکوٹ کی ہدایت پر پنچائت حیاتپورہ اور کلالی میں گرام سبھاکے دوران سال 2019-20  کیلئے ترقیاتی پلان کو حتمی شکل دی گئی جس میں متعلقہ پنچایتوں کے سرپنچوں و پنچوں کے علاوہ کثیر تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔اس موقعہ پر متعلقہ پنچائت سیکریٹری نے پلان کے علاوہ ایس بی ایم ودیگراسکیموں کے بارے میں بھی لوگوں کو جانکاری دی۔انہوں نے کہا کہ ہر ایک بیروزگار نوجوان کوایک سو دن کا روزگار دیاجائے تاکہ پنچایت میں تعمیروترقی کی سرگرمیوں میں سرعت آئے ۔اس دوران لوگوں نے بلاک ڈیولپمنٹ افسر منجاکوٹ نواز چوہدری اور متعلقہ پنچایت سیکرٹری کی سراہنا کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ آئندہ بھی ایسے پروگرام منعقد ہوتے رہیں گے۔  

فوج کی جانب سے یوم نوشہرہ تقریب کااہتمام

راجوری//گزشتہ روز فوج کی جانب سے مہلوک نائیک جادوناتھ سنگھ ،پی سی اوردیگرجان بحق ہونے والے فوجیوں کی یادمیں یوم نوشہرہ منانے کیلئے تقریب کیااوریادگارپرپھول مالائیں چڑھاکر انہیں خراج عقیدت پیش کیا۔ اس دوران فوجی اعزازکے ساتھ جان بحق فوجیوں کی یادمنائی گئی اورانہیں خراج پیش کیاگیا۔جنرل آفیسرکمانڈنٹ ،وائٹ نائٹ کارپس لیفٹیننٹ پرمجیت سنگھ ،جنرل آفیسرکمانڈنگ ،ایس آف سپیڈ ڈویژن،میجرجنرل ایچ دھرماراجن، جنرل آفیسراِن کمانڈنگ ،رومیوفورس، میجرجنرل پی ایس باجوا اورسول وپولیس اورفوج کے افسران نے تقریب میں شمولیت اختیارکی۔نوشہرہ ڈے کی تقریب کے دوران خطاب کرتے ہوئے جنرل آفیسرکمانڈنگ وائٹ نائٹ کارپس جنرل پرمجیت سنگھ نے کہاکہ اگلی چوکیوں پرتعینات فوج دشمن کومنہ توڑجواب دے رہی ہے اورہرمذموم سازش کوناکام بنانے کیلئے تیارہے۔اس دوران طبی کیمپ اورمصنوعی اعضاء کے دان کاکیمپ بھی منعقدکیاگیا۔اس دوران 30 و

گورنمنٹ مڈل اسکول کوسلیاں کی عمارت گرنے کے درپہ ، محکمہ تعلیم بے خبر

پونچھ//سرحدی ضلع پونچھ جوریاست جموں و کشمیر کے پسماندہ ترین علاقہ جات میں شمارہونے کے ساتھ ساتھ سرحدپرہندپاک افواج کے مابین گولہ باری کے تبادلے سے بھی متاثررہتاہے کے لوگوں کوبنیادی سہولیات کی عدم دستیابی کے سبب مشکلات کاسامناکرناپڑرہاہے۔لوگوں کاکہناہے کہ انتظامیہ کی طرف سے عوام کوبہترتعلیمی نظام کی فراہمی کے دعوئوں میں صداقت نہیں ہے اوراس کاجیتاجاگتاثبوت خستہ حالی کاشکار گورنمنٹ مڈل اسکول کوسلیاں ہے ۔اگرچہ ضلع کے بہت سے دیگرسکول بھی بدحالی کے شکارہیں لیکن گورنمنٹ مڈل سکول کوسلیاں میں لوگ سکول کی عمارت کی خستہ حالی کے پیش نظر بچوں کوسکول میں داخلہ کرانامناسب نہیں سمجھتے ہیں۔مقامی ذرائع کے مطابق گورنمنٹ مڈل اسکول ایس ایس ایس سکیم کے تحت تعمیرکیاگیاہے کی خستہ حالی کااندازہ اس بات سے لگایاجاسکتاہے کہ سکول کی چھت کسی بھی وقت گرسکتی ہے اوراکثراساتذہ اوربچے کھلے آسمان تلے بیٹھناپسندکرتے ہیں۔

مزید خبرں

راجوری پونچھ شاہراہ کی حالت ابتر ڈرائیوروں ومسافروں کوپریشانی کاسامنا پرویز خان   راجوری سے پونچھ کوملانے والی شاہراہ پرجگہ جگہ بنے بڑے بڑے کھڈوں کی وجہ سے لوگوں (مسافروں)کوسخت پریشانیوں کاسامناکرناپڑرہاہے لیکن انتظامیہ کی طرف سے شاہراہ کی مرمت کیلئے خاطرخواہ اقدامات نہیں اٹھائے جارہے ہیںجس کی وجہ سے عوام الناس میں تشویش اورغم وغصہ پایاجاتاہے۔تفصیلات کے مطابق راجوری ۔پونچھ شاہراہ پر کئی مقامات پر بڑے بڑے کھڈے پڑ چکے ہیں جس سے جہاں ڈرائیوروں کو گاڑی چلانے میں دشواری سے گزرنا پڑرہاہے وہیں مسافروں کوسفرکرنے میں مشکلات کاسامناہے۔اس سلسلے میں شہزاد چوہدری،پرویز خان،محمد عامر اور غلام مصطفٰی نامی افرادنے کہا کہ شاہراہ پر بڑے بڑے کھڈے پڑ چکے ہیں جس سے محکمہ گریف کی ناقص کارکردگی ظاہرہوتی ہے۔انہوں نے کہاکہ حالانکہ کچھ ہی عرصہ قبل راجوری پونچھ شاہراہ پر بلیک ٹاپ بچھایا گیا